کیلاشہ میرج ایکٹ : ملکی تاریخ میں پہلی بار وادی کیلاش میں شادی کے حوالے سے حیران کن قوانین منظور کر لیے گئے

لاہور (ویب ڈیسک)خوبصورت وادی چترال کی پہچان اور دنیا میں اپنے لباس اور ثقافت کی وجہ سے شہرت رکھنے والے کیلاش قبیلے میں شادی کو قانونی حیثیت دینے پر کام شروع کر دیا گیا۔نجی ٹی وی چینل کے مطابق کیلاش قبیلے کے74 قاضیوں کی مشاورت سے پہلی بار کیلاشہ میرج ایکٹ کے لئے ڈرافٹ

کی تیاری شروع کر دی گئی، دسمبر کے دوسرے ہفتے تک مکمل کر لیا جائیگا۔ دو ہزار خاندانوں پر مشتمل دنیا کے قدیم قبیلے میں کیلاشہ میرج ایکٹ کے نفاذ سے کیلاش کمیونٹی سے تعلق رکھنے والے افراد کو شادی، جہیز، طلاق اور وارثت میں حقوق کو قانونی تحفظ مل جائے گا۔وزیر اعلیٰ کے مشیر اقیلیتی امور وزیر زادہ نے ایکسپریس ٹربیون سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ جس طرح ہندو میرج ایکٹ، کرسچئن میرج، مسلمانوں کی شادی اور طلاق وغیرہ کے قوانین موجود ہیں، اب کیلاش کمیونٹی کے حقوق کو بھی قانونی شکل دی جائے گی۔ کیلاش کی آبادی 4 ہزار کے قریب ہے جن میں 46 فیصد خواتین اور 54 فیصد مرد ہیں، دوسری جانب ضلع کونسل چترال کے رکن عمران کبیر کا کہنا ہے کہ جو کیلاش کی رُمبر وادی میں بچوں کو کالاشا زبان سکھاتے اور پڑھاتے ہیں اور ساتھ ہی کالاشا مذہب کے فروغ پر بحث کرنے کے لیے فوراً راضی ہو جاتے ہیں۔ہماری زبان کا ادب بالکل موجود نہیں ہے۔ لوگ ہماری اصطلاحات کو سمجھے بغیر ان کے بارے میں بہت غلط غلط باتیں کہتے بھی ہیں، لکھتے بھی ہیں لیکن میرے بحث کرنے پر دور بھاگتے ہیں۔’عمران نے مثال دیتے ہوئے کہا کہ اگر ایک میت کے آگے لوگ ناچ رہے ہیں تو وہ اُن کے لیے صحیح ہے لیکن باقی دیکھنے والوں کے لیے تعجب کی بات ہوسکتی ہے۔میرے لیے یہ زندگی کا جشن ہے۔ آپ روئیں تو بھی مُردہ اسی حال میں ہی رہتا ہے اور اگر آپ ناچیں تو بھی مردے کو فرق نہیں پڑتا۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *