سعودی ہسپتال نے ماںکی غیرموجودگی میں ایک سال تک پاکستانی بچے کی نگہداشت کرکے مثال قائم کردی

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)سعودی ہسپتال نے پاکستانی بچے کی نگہداشت کرکے انسانی حقوق کی بہترین مثال قائم کردی۔ مکہ مکرمہ کے زچہ بچہ ہسپتال نے ایک سال تک دیکھ بھال کے بعد پاکستانی بچے کو قونصل ویلفیئر ثاقب علی خان کے حوا لے کیا جس پر انہوں نے سفیر پاکستان اور قونصل جنرل کی جانب سے ہسپتال کے ڈائریکٹر کا شکریہ ادا کیا۔

روزنامہ پاکستان میں اکرم اسد کی شائع خبر کے مطابق عمرہ پر آئی ایک پاکستانی خاتون نے مکہ مکرمہ قیام کے دوران اس بچے کو جنم دیا،بعد ازاں کورونا وبا کی وجہ سے خاتون مجبوراً پاکستان چلی گئی۔ اس دوران ہسپتال انتظامیہ نومولود کی دیکھ بھال کرتی رہی اور اب اسے پاکستانی قونصلیٹ کے حوالے کیا، قونصلیٹ نے بچے کو پاکستان بھجوا دیاجہاں اسے والدین کے حوالے کر دیا گیا۔مکہ مکرمہ زچہ بچہ ہسپتال کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر ہلال المالکی نے بتایا کہ بچہ آپریشن سے پیدا ہوا تھا۔ اس کا وزن ایک کلو تھا اور پری میچور تھا۔ اسے 46 دن تک مصنوعی تنفس پر رکھا گیا۔ ڈاکٹر عطیہ بن صالح الزہرانی نے جو زچہ بچہ ہسپتال میں میڈیکل ڈائریکٹر بھی ہیں بتایا کہ پاکستانی بچے کو تقریباً ایک برس تک آئی سی یو میں رکھنے کے بعد اسے سماجی نگہداشت کے ادارے کے سپرد کردیا گیا تھا۔رپورٹ کے مطابق ہسپتال کے عہدیدار مسلسل ایک سال تک نہ صرف بچے کی نگہداشت کا اہتمام کرتے رہے بلکہ اس دوران اس کے ماں باپ سے بھی مسلسل رابطے میں رہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.

site-verification: a5f3ae327aefe7db9b1fdb6f7c6a8b26